LOADING

Type to search

عمرہ کی دعائیں

Share

مبارک ہو! اللہ تعالی نے آپ کو عمرہ کے مقدس سفر پر جانے کے لئے منتخب کر لیا ہے، اب جہاں آپ کو عمرہ کے مبارک سفر پر جانے کے لئے بہت ساری تیاریاں کرنی ہے وہیں عمرہ کی دعائیں اور اذکار کو جاننا اور اس کے لئے ایک فہرست تیار کرنا بھی ضروری ہے۔

یہ ایک ایسا عمل ہے جسے کرنے کے بعد آپ گناہوں سے ایسے پاک ہوجائیں گے جیسے ایک نوزائیدہ بچہ ہوتا ہے، لہذا اسے مسنون طریقہ سے صرف اللہ تعالی کی رضامندی حاصل کرنے کے لئے ادا کیجئے، عمرہ می دعا گو ہے کہ اللہ عز و جل آپ کے عمرے کو قبول فرمالے اور آپ کے دامن کو سعادتوں سے بھر دے، آمین۔

ویسے تو عمرہ کا مکمل سفر ایسا ہے جس میں دعائیں قبول ہوتی ہیں لیکن اس دوران کچھ خاص ایسے بھی مواقع ہیں جن کے متعلق نصوص میں وضاحت ہے کہ وہاں دعائیں قبول ہوتی ہیں، اسی لئے ان مواقع پر دعاؤں کا اہتمام کرنا چاہیے۔ ذیل میں آپ کی آسانی کے لئے عمرہ کی دعائیں ذکر کی جارہی ہیں جس کا آپ دوران سفر اہتمام کر سکتے ہیں۔

عمرہ کے سفر پر روانہ ہونے کی دعا

پیارے نبی ﷺ سے عمرہ یا حج کے سفر پر روانہ ہونے کے لئے جو دعا صحیح حدیث سے ثابت ہے وہ ہے:

«الله أكبر، الله أكبر، الله أكبر، سُبْحانَ الَّذِي سَخَّرَ لَنَا هَذَا وَمَا كُنَّا لَهُ مُقْرِنِينَ وَإِنَّا إِلَى رَبِّنَا لَمُنقَلِبُونَ، اَللَّهمَّ إِنَّا نَسْاَلُکَ فِي سَفَرِنَا هذَا الْبِرَّ وَالتَّقْوَی وَمِنْ الْعَمَلِ مَا تَرْضَی، اَللَّهمَّ هوِّنْ عَلَينَا سَفَرَنَا هذَا، وَاطْوِ عَنَّا بُعْدَه، اللَّهمَّ اَنْتَ الصَّاحِبُ فِي السَّفَرِ وَالْخَلِيفَةُ فِي الْأَهلِ، اللَّهمَّ إِنِّي أَعُوذُ بِکَ مِنْ وَعْثَائِ السَّفَرِ وَکَآبَةِ الْمَنْظَرِ وَسُوء الْمُنْقَلَبِ فِي الْمَالِ وَالْأَهلِ،۔۔۔» (رواه مسلم)

اللہ سب سے بڑا ہے، اللہ سب سے بڑا ہے، پاک ہے وہ ذات جس نے اس سواری کو ہمارے لئے مسخر کر دیا، ہم اس کو مسخر کرنے والے نہ تھے، اور ہم اپنے پروردگار کے پاس لوٹ کر جانے والے ہیں۔ اے اللہ! ہم تجھ سے اپنے اس سفر میں نیکی اور پرہیزگاری کا سوال کرتے ہیں اور ان کاموں کا سوال کرتے ہیں، جن سے تیری رضامندی حاصل ہوتی ہے۔ اے اللہ! ہمارے لئے اس سفر کو آسان کر دے اور اس کی مسافت کی دوری کو سمیٹ دے، اے اللہ! اس سفر میں تو ہی ہمارا رفیق ہے اور گھر میں ہمارا نگہبان ہے۔ اے اللہ! میں سفر کی تکلیفوں سے، رنج و غم سے اور اپنے اہل اور مال کے برے انجام سے تیری پناہ میں آتا ہوں‘‘

عمرہ اسی طریقہ سے ادا کرنا چاہیے جس طرح پیارے نبی ﷺ نے ادا کیا، اسی طرح کسی خاص موقع پراگر نبی کریم ﷺ سے کوئی دعا وارد ہے تو اس کا اہتمام کرنا چاہیے، ہاں البتہ اللہ سے مانگنے کی کوئی انتہا نہیں ہے، مومن بندہ جتنا چاہے اپنے رب العالمین سے مانگے، کیونکہ مانگنے سے اللہ تعالی خوش ہوتا ہے۔ وہ خاص مواقع جہاں پیارے نبی ﷺ سے عمرہ کی دعائیں وارد ہیں ان کو ذیل میں ذکر کیا جارہا ہے تاکہ عمرہ کے ارکان کی ادائیگی میں نبی کریم ﷺ کی پیروی کے ساتھ ساتھ عمرہ کی دعاؤں میں بھی پیروی کی جاسکے۔

عمرہ کی نیت

پیارے نبی ﷺ کی حدیث سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ تمام اعمال کا دار و مدار نیت پر ہے “إِنَّمَا الأَعْمَالُ بِالنِّيَّاتِ” اسی لئے ہر نیک عمل کے لئے نیت ضروری ہے، ہمیں چاہیے کہ ہم اپنے اعمال کو خالص اللہ تعالی کی رضامندی کے لئے انجام دیں۔

جہاں تک عمرہ کی نیت کی بات ہے تو میقات پر عمرہ کا احرام باندھ کر نیت کرنی چاہیے، اس کا طریقہ یہ ہے کہ میقات پر غسل کرکے احرام باندھ لیا جائے، دو رکعت نفل ادا کیا جائے اور تلبیہ پڑھتے ہوئے عمرہ کی نیت کیا جائے:

لَبَّيْكَ اللَّهُمَّ لَبَّيْكَ ، لَبَّيْكَ لا شَرٍيك لَك لَبَّيْكَ. إنَّ الحَمْدَ والنِعْمَةَ لَكَ والمُلْك. لا شَرِيِكَ لك

حاضر ہوں اے اﷲ میں حاضر ہوں میں حاضر ہوں تیرا کوئی شریک نہیں، میں حاضر ہوں۔ بے شک تمام قسم کی تعریفات تیرے ہی لائق ہیں، تمام نعمتیں تیری ہی دی ہوئی ہیں، بادشاہت تیری ہی ہے اور تیرا کوئی شریک نہیں۔

اور یہ دعا پڑھ لیا جائے:

“اَللّٰهُمَّ إِنِّيْ أُرِيْدُ الْعُمْرَةَ فَيَسِّرْهَا لِيْ وَتَقَبَّلْهَا مِنِّيْ”

“اے اللہ، میں عمرہ ادا کرنے کی نیت کرتا ہوں، تو اس کی ادائیگی کو آسان کردے اور اسے میری جانب سے قبول فرما لے”

اگر کوئی یہ الفاظ نہ کہے اور دل میں عمرہ کی نیت کرلے اور احرام باندھ کر تلبیہ پڑھ لے تو بھی عمرہ ادا ہوجائے گا۔

اگر کوئی اپنے گھر یا اپنے شہر میں غسل کرکے احرام باندھا ہو تو وہ ابھی نیت نہ کرے، بلکہ جب جہاز پرواز کر جائے اور میقات آجائے تو پہلے عمرہ کی نیت کرے پھر تلبیہ پڑھے۔

جیسے جیسے آپ مکہ مکرمہ کی طرف پرواز کرتے رہیں، تلبیہ پڑھتے رہیں اور پیارے نبی ﷺ پر درود بھیجتے رہیں۔ جب آپ مسجد الحرام کے پاس پہونچ جائیں، تو کوشش کریں کہ ‘السلام’ دروازہ سے مسجد میں داخل ہوں اور دایاں پاؤں آگے کرتے ہوئے یہ دعا پڑھیں:

“بسم الله، والصلاة والسلام على رسول الله،

أعوذ بالله العظيم، وبوجهه الكريم، وسلطانه القديم، من الشيطان الرجيم، اللهم افتح لي أبواب رحمتك۔”

اللہ کے نام سے، درود و سلام ہو پیارے نبی ﷺ پر،

میں اللہ عز و جل کی پناہ میں آتا ہوں شیطان مردود سے، اے اللہ، میرے لیے اپنی رحمت کے دروازے کھول دے۔

کعبہ شریف پر جب پہلی نظر پڑے تو کیا پڑھنا چاہیے؟

جب آپ کی نظر پہلی بار کعبہ شریف پر پڑے تو خوب دعائیں مانگیے کیونکہ یہ ان مواقع میں سے ایک ہے جہاں دعا قبول ہوتی ہیں اور یہ احادیث نبویہ سے ثابت ہے۔ اس موقع پر ایک دعا منقول ہے جس کا ذکر نیچے کے سطور میں کیا جا رہا ہے، اس کے علاوہ رب العالمین سے دنیا اور آخرت کی بھلائی میں سے جو دل چاہے مانگیے کہ اس وقت دعا قبول ہوتی ہے۔

“الله أكبر الله أكبر الله أكبر، اللہم زد ہذا البیت تشریفًا وتعظیمًا وتکریمًا ومہابةً وزد من شرفہ وکرمہ ممن حجہ أو اعتمرہ تشریفا وتکریما وتعظیمًا وبرًا،  اللہم أنت السلام ومنک السلام حینا ربنا بالسلام”

اللہ سب سے بڑا ہے، اللہ سب سے بڑا ہے اللہ سب سے بڑا ہے، اے اللہ اس گھر کی بزرگی وتعظیم وتکریم ورعب وھیبت میں مزید اضافہ فرما۔ اور جو کوئی اس کا حج یا عمرہ کرے، اس کی عزت وتکریم وبزرگی وعظمت اور بھلائی میں اضافہ فرما، اے اللہ تو سلام ہے اور تری طرف سے سلام اترتا ہے، لہٰذا ہمارے پروردگار ہمیں سلامتی کے ساتھ زندہ رکھ۔

طواف کے دوران کی دعا

طواف کے دوران کی کوئی خاص دعا نبی کریم ﷺ سے ثابت نہیں ہے، سوائے صرف ایک دعا کے اور وہ ہے:

‘رَبَّنَآاٰ تِنَا فِیْ الدُّنْیَا حَسَنَۃً وَّفِیْ الاٰخِرَۃِ حَسَنَۃً وَّقِنَا عَذَابَ النَّار’

’’ اے ہمارے رب ہمیں دنیا میں بھی اچھائی عطا کر اور آخرت میں بھی اچھائی عطا کر اور ہمیں دوزخ کے عذاب سے بچانا ‘‘

یہ دعا رکن یمانی اور حجر اسود کے درمیان پڑھی جاتی ہے۔ اسکے علاوہ جو دعا بھی دل میں آئے اور جسکا تعلق دنیا و آخرت کی پسندیدہ اچھائیوں کی طلب سے ہو وہ طواف کرتے ہوئے کی جاسکتی ہے۔

زمزم کا پانی پیتے وقت یہ دعا پڑھنی چاہیے:

‘اللھُمَّ إِنِّيْ أسْألُکَ رزقًا وَّاسِعًا وعلمًا نَافِعًا وَشِفَاءً مِنْ کُلِّ دَاءٍ’

اے اللہ! میں آپ سے وسعت رزق، علم نافع اور ہربیماری سے شفایابی مانگتا ہوں۔

صفا اور مروہ کی دعا

آب زم زم سے فارغ ہونے کے بعد سعی بین الصفا و المروہ کے لئے جانا ہے، پہلے کوہ صفا کی طرف یہ کہتے ہوئے جانا ہے:

أَبْدَاُ بِمَا بَدَأَ اللہُ تَعَالٰی ﴿إِنَّ الصَّفَا وَالْمَرْوَةَ مِنْ شَعَآئِرِ اللہِ﴾

میں اس سے ابتدا کرتا ہوں جس سے اللہ تعالی نے ابتدا کی، بے شک صفا اور مروہ اللہ تعالی کی نشانیوں میں سے ہیں۔

جب آپ مسجد حرام سے باہر نکلنے کا ارادہ کریں تو پہلے اپنا بایاں پاؤں باہر نکالیں اور یہ دعا پڑھیں:

“بسم الله والصلاة والسلام على رسول الله، اَللّٰهُمَّ إِنِّی أَسْأَلُك مِنْ فَضْلِك”

اللہ کے نام سے، اور درود و سلام ہو پیارے نبی ﷺ پر، اے ﷲ ! میں تجھ سے تیرے فضل کا سوال کرتا ہوں۔

دعائیں کرنے سے پہلے نبی کریم ﷺ پر درود ضرور بھیجنا چاہیے جیسا کہ عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ سے مروی ہے:

“دعا آسمان اور زمین کے درمیان معلق رہتی ہے اور اس وقت تک اوپر (قبولیت کے لئے) نہیں جاتی جب تک کہ نبی کریم ﷺ پر درود نہ بھیجا جائے”

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *